Zah e naseeb humei’n dil ke ghar mein rakhte hain,
Nazar bacha ke sabhi ki nazar mein rakhte hain;

Kheench lete hain apni taraf adaao’n se,
Muskura ke phir humko aqab mein rakhte hain;

Tamaam umr ki khawahish humein bana kar woh,
Khushi khushi humein daar o dahar mein rakhte hain;

Hamare dil se guzar jaati hain hazaaro’n balaa,
Woh fikr bhi to hamaari sitam ki rakhte hain;

Kahin zahoor e elaahi hua to poochenge,
Yeh kis balaa ki mohabbat woh humse rakhte hain;

Woh ek shakhs hamaari khushi ka haasil hai,
Jisey sajaa ke hum apni ghazal mein rakhte hain.

زہے نصیب ہمیں دل کے گھر میں رکھتے ہیں،
نظر بچا کے سبھی کی نظر میں رکھتے ہیں۔

کھینچ لیتے ہیں اپنی طرف اداؤں سے،
مسکرا کر پھر ہمکو عقب میں رکھتے ہیں۔

تمام عمر کی خواہش ہمیں بنا کر وہ،
خوشی خوشی ہمیں دار و دہر میں رکھتے ہیں۔

ہمارے دل سے گزر جاتی ہے ہزاروں بلا،
وہ فکر بھی تو ہماری ستم کی رکھتے ہیں۔

کہیں ظہورِ اِلاہی ہوا تو پوچھینگے،
یہ کس بلا کی محبت وہ ہمسے رکھتے ہیں۔

وہ ایک شخص ہماری خوشی کا حاصل ہے،
جسے سجا کے ہم اپنی غزل میں رکھتے ہیں۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s